bihar-bjp-candidate-paradeep-singh-ontroversial-statement

بہار: بی جے پی امیدوار پردیپ سنگھ کا متنازعہ بیان

بہار: بی جے پی امیدوار پردیپ سنگھ کا متنازعہ بیان

نئی دہلی،12؍اپریل (آئی این ایس انڈیا)

بہار میں ارریہ سے بی جے پی امیدوار اور سابق ایم پی پردیپ سنگھ ایک بار پھر تنازعات کے گھیرے میں ہیں۔دراصل ان کا ایک مبینہ آڈیو کلپ ان دنوں وائرل ہوا ہے، جس میں مبینہ طور پر پردیپ سنگھ اپنے ایک حامی کملیش کے ساتھ بات چیت کر رہے ہیں۔جس میں وہ انتخابات میں اپنے مخالف امیدوار راشٹریہ جنتا دل کے سرفراز عالم کو شکست دینے کے لئے تجاویز بتا رہے ہیں۔ اس سے پہلے پردیپ سنگھ نے کہا کہ جو بولے لالٹین اسکو بولئے ’بھارت ماتا کی جے‘۔اس کے بعد نوجوانوں کی تعداد کم از کم 50 تک ہونا چاہئے انہیں پیشانی میں بھگوا رنگ کی پٹی باندھ کر اور تلک لگاکر موٹر سائیکل سے گھومنے کے لیے بولیے۔آڈیو میں وہ مداحوںکو مشورہ دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ نوجوانوں کو صرف یہی کہنا چاہئے کہ ہندوتو کے نام پر لوگ متحد ہوں۔کیونکہ ہندو مذہب کی حفاظت کرنا ہے۔ہندوؤں کو بچانا ہے، ارریہ کو پاکستان نہیں بننے دینا ۔ہندوستان کے ٹکڑے نہیں ہونے دیں گے۔لیکن ساتھ ہی ساتھ پردیپ سنگھ نے ہنگامہ کرنے کی ہدایات بھی اس آڈیو کلپ میں دی ہے۔ پچھلے سال بھی ضمنی انتخابات کے دوران مرکزی وزیر گری راج سنگھ نے ارریہ میں ایک جلسہ عام کے دوران کہا تھا کہ اگر آر جے ڈی یہاں سے جیت گئی تو ارریہ پاکستان بن جائے گا جس پر وزیر اعلی نتیش کمار نے کافی ناراضگی ظاہر کی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں