zioni-netanyahu-stupid-gaza-west_edge-beds-israel-integrate-palastine

صیہونی وزیر اعظم کااحمقانہ عندیہ: غزہ کے مغربی کنارے کی بستیوں کو اسرائیل میں ضم کی جائیں گی

صیہونی وزیر اعظم کااحمقانہ عندیہ:
غزہ کے مغربی کنارے کی بستیوں کو اسرائیل میں ضم کی جائیں گی

واشنگٹن 7اپریل ( آئی این ایس انڈیا )

صہیونی وزیر اعظم بن یامین نیتن یاہو نے ہفتے کے روز کہا ہے کہ دوبارہ انتخاب جیتنے پر وہ مغربی کنارے کی مقبوضہ اسرائیلی بستیوں کو ضم کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ان کے اس انتخابی وعدہ کے نتیجے میں فلسطینی اور عرب دنیا کی برہمی پر مبنی رد عمل سامنے آ سکتا ہے۔نو اپریل کو ہونے والے عام انتخابات سے قبل، اسرائیلی ٹیلی ویژن چینل کو دیئے گئے انٹرویو میں، نیتن یاہو سے پوچھا گیا آیاانھوں نے مغربی کنارے کی بڑی بستیوں کو حق حاکمیت کیوں نہیں دیا، جیسا کہ بغیر بین الاقوامی منظوری کے مشرقی یروشلم اور گولان ہائٹس کے معاملے پر کیا گیا ہے، جنھیں 1967 کی مشرق وسطیٰ کی لڑائی کے دوران قبضے میں لیا گیا تھا۔نیتن یاہو نے کہا کہ کس نے کہا ہے کہ ہم ایسا نہیں کریں گے؟ ہم ایسا کرنے والے ہیں اور ہم اس بارے میں سوچ رہے ہیں ۔ تو اس کے جواب میں نتین یاہو نے کہا کہ آپ معلوم کر رہے ہیں کہ اگلے مرحلے میں ہم کیا کرنے والے ہیں۔ اس کا جواب ہاں میں ہے کہ ہم اگلے مرحلے کی طرف جائیں گے۔ میں (اسرائیلی) اقتدار اعلیٰ کو وسعت دوں گا، اور میں آباد بستیوں اور ویران بستیوں میں کوئی فرق نہیں کرتا۔نیتن یاہو دائیں بازو سے تعلق رکھنے والی جماعتوں کے اتحاد کے ساتھ انتخاب لڑ رہے ہیں، جو علاقہ ضم کرنے کی وکالت کرتی ہیں۔ ان کا بیان سخت گیر ووٹروں کو بھا سکتا ہے، جو اس بات پر اعتراض کرتے ہیں کہ زمین فلسطینیوں کے حوالے کیوں کی جائے ۔فلسطینی صدر محمود عباس کے ترجمان، نبیل ابو ردینہ نے رائٹرز کو بتایا کہ کسی قسم کے اقدامات اور اعلانات کے نتیجے میں حقائق تبدیل نہیں ہوں گے۔ بستیوں کی تعمیر ناجائز ہے اور انہیں ہٹایا جائے گا۔فلسطینی مغربی کنارے، مشرقی یروشلم اور غزہ کی پٹی پر مشتمل اپنی ریاست قائم کرنے کے خواہاں ہیں، جس تمام علاقے پر 1967 میں اسرائیل نے قبضہ کیا تھا۔ اسرائیل نے مشرقی یروشلم کو ضم کر دیا ہے جب کہ غزہ سے واپس چلا گیا ہے۔ مغربی کنارا اسرائیلی فوج کے قبضے میں ہے جہاں فلسطین کو محدود خودمختاری حاصل ہے۔اسرائیل فلسطین امن بات چیت 2014سے رکی ہوئی ہے، جس کی بحالی کی راہ میں بستیوں کی تعمیر کا معاملہ آڑے ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں