world_kidney_day-kidneys-growth-strong-awakened-hamida_tariq

بچوں میں گردے کے بڑھتے امراض کے تئیں عوام کو بیدار کئے جانے کی سخت ضرورت: ڈاکٹر حمیدہ طارق

بچوں میں گردے کے بڑھتے امراض کے تئیں عوام کو
بیدار کئے جانے کی سخت ضرورت: ڈاکٹر حمیدہ طارق

علی گڑھ ، 15 مارچ(آئی این ایس انڈیا)

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی (اے ایم یو) کے جواہر لعل نہرو میڈیکل کالج کے شعبۂ امراضِ اطفال کے نیفرو لوجی سیکشن میں ’’ عالمی یومِ گردہ‘‘( ورلڈ کڈنی ڈے) کے موقع پرمنعقدہ کوئز اور پوسٹر میکنگ مقابلہ کے فاتح شرکاء کو مہمانِ خصوصی ممتاز ماہرِ امراضِ اطفال ڈاکٹر حمیدہ طارق نے انعامات سے سرفراز کیا۔پوسٹر میکنگ مقابلہ میں اول انعام مشترکہ طور پر ریحانہ یوسف، مقدس صنم و زہرہ انصاری کو دیا گیا جبکہ دوئم انعام لئیق رحمن، عفان مجتبیٰ خاں و شِوَم اگروال اور سوئم انعام سونالی،لبنیٰ اور سنبل کو دیا گیا۔کوئز مقابلہ میں سمرین شاہد، پرنے شرما و شبھی پاٹھک کو بالترتیب اول، دوئم و سوئم انعامات سے سرفراز کیا گیا جبکہ2014بیچ کے نور محمد لاری،2015بیچ کی عفیفہ مغیث،2016بیچ کی عظمیٰ پروین خاں،2017بیچ کے انوج شنکر وارشنی اور نرسنگ کی طالبہ انم سرفراز و شبانہ پرون کو بھی کوئز مقابلہ میں انعامات سے نوازا گیا۔ڈاکٹر حمیدہ طارق نے شعبۂ امراضِ اطفال کی سرگرمیوں پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ شعبہ مسلسل ترقی کی راہ پر گامزن ہے۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح سے بچوں میں گردے کے امراض بڑھ رہے ہیں اس کے لئے عوام کو اس کے تئیں بیدار کئے جانے کی ضرورت ہے۔نیفرو لوجی سیکشن کے انچارج ڈاکٹر پروفیسر کامران افضال نے کہا کہ اس سال ’’ ورلڈ کڈنی ڈے‘‘ کا عنوان ’’گردہ کی صحت ہر جگہ سب کے لئے‘‘ قرار پایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اعداد و شمار کے مطابق تقریباً850ملین افراد گردے کے امراض کا شکار ہیں اور ہر سال تقریباً2.4ملین افراد اس سے موت کا شکار ہوجاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس سے کم و درمیانی آمدنی والے ممالک میںبیشتر لوگ اس سے متاثر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صحت مند طرزِ حیات اپنا کر اس مرض سے نجات حاصل کی جاسکتی ہے۔ پروفیسر کامران نے بتایا کہ نیفرو لوجی سینٹر میں تقریباً ایک ہزار بچے پیشاب کے انفیکشن کے علاج کے لئے رجسٹرڈ ہیں اور آیوشمان صحت منصوبہ کے شروع ہونے سے یقینی طور پر غریبوں کا فائدہ پہنچے گا۔نظامت جے آر دوئم ڈاکٹر جیوتسنا سنگھ نے کی۔ پروگرام کے انعقاد میں ڈاکٹر نیل کنٹھ سین و ڈاکٹر سونالی نے اہم رول ادا کیا۔اس موقع پر شعبۂ امراضِ اطفال کے پروفیسر ایس مناظر علی، ڈاکٹر شاد عبقری، ڈاکٹر عظمیٰ فردوس و ڈاکٹر ارج عالم وغیرہ بھی موجود تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں