iran-saudi-arabia-engaged-dangerous-nuclear-activities

ایران: سعودی عرب خطرناک جوہری کاروائیوں میں مصروف ہے

ایران: سعودی عرب خطرناک جوہری کاروائیوں میں مصروف ہے

ایران،13؍مارچ(ایجنسیز)

ایران کی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹری جنرل علی شہمانی نے سعودی عرب کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ علاقے کے بعض ممالک پیٹرول سے حاصل کردہ ڈالروں کو عالمی سلامتی کو خطرے میں ڈال سکنے والی جوہری کاروائیوں میں خرچ کر رہے ہیں۔

ایران کے سرکاری ٹیلی ویژن چینل کی خبر کے مطابق مغربی آذربائیجان سے منسلک شہر اورومیے میں منعقدہ ایک تقریب سے خطاب میں شمہانی نے نام ظاہر کئے بغیر سعودی عرب کو مشتبہ جوہری پروگرام چلانے کا قصوروار ٹھہرایا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ علاقے کے بعض ممالک اپنے پیٹرو۔ڈالروں کو عالمی سلامتی کو خطرے میں ڈال سکنے کی حد تک مشتبہ جوہری کاروائیوں میں لگا رہے ہیں۔

انہوں نے متنبہ کیا ہے کہ یہ کاروائیاں اپنے ساتھ علاقائی اور گلوبل خطرات لائیں گی اور ایران کو نئے خطرات کو پیش نظر رکھتے ہوئے اپنی دفاعی حکمت عملی پر نظر ثانی کرنا پڑے گی۔

واضح رہے کہ امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 12 فروری کو جوہری پاور جنریٹنگ فرموں کے ساتھ ملاقات میں سعودی عرب کو جوہری ٹیکنالوجی کی منتقلی کے بارے میں بات چیت کی تھی۔

تاہم قومی اسمبلی کی حکومتی احتساب و اصلاحات کمیٹی نے ٹرمپ انتظامیہ کی طرف سے ریاض کو جوہری ٹیکنالوجی کی منتقلی کے خلاف تحقیقات کا آغاز کروا کے ایک رپورٹ تیار کی تھی۔

رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ سعودی انتظامیہ، ٹرمپ اور ان کی انتظامیہ کے ساتھ گہرے رابطے میں دکھائی دے رہی ہے اور خدشہ محسوس کیا جا رہا ہے کہ سعودی عرب امریکہ سے حاصل کردہ ٹیکنالوجی کو ایٹم بم کی تیاری میں استعمال کرے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں