mla-resigns-gujarat-congress

گجرات کانگریس سے ایک اور رکن اسمبلی کا استعفیٰ

گجرات کانگریس سے ایک اور رکن اسمبلی کا استعفیٰ

احمد آباد،11 مارچ(آئی این ایس انڈیا)

کانگریس ورکنگ کمیٹی کی یہاں میٹنگ سے ایک دن پہلے جام نگر (دیہی) سے رکن اسمبلی ولبھ دھارویا نے پارٹی چھوڑ دی اور اسمبلی کے صدر راجندر ترویدی کو پیر دوپہر کو استعفی سونپ دیا۔گزشتہ چار دنوں میں کانگریس کے تین ممبران اسمبلی نے استعفی دیا ہے۔ترویدی نے اس کی تصدیق کرتے ہوئے کہاکہ دھارویا نے جام نگر (دیہی) کے ممبر اسمبلی عہدے سے استعفی دے دیا۔انہوں نے مجھے بتایا کہ وہ اپنی مرضی سے استعفی دے رہے ہیں۔دھارویا کے استعفی سے پہلے ان کی پارٹی کے سابق ساتھی پرشوتتم سباریا نے آٹھ مارچ کو دھراگدھرا ممبر اسمبلی کے عہدے سے استعفی دے دیا تھا۔وہ حکمران بی جے پی میں شامل ہو گئے تھے۔سباریا کو آبپاشی گھوٹالے کے سلسلے میں گزشتہ سال اکتوبر میں گرفتار کیا گیا تھا اور گجرات ہائی کورٹ سے انہیں فروری میں ضمانت ملی تھی۔سباریا نے کہا کہ ان پر بی جے پی میں شامل ہونے کا دباؤ نہیں تھا اور ساتھ ہی دعوی کیا تھا کہ وہ اپنے حلقہ کی ترقی کے لئے پارٹی تبدیل کر رہے ہیں۔آٹھ مارچ کو ماودر سے کانگریس ممبر اسمبلی جواہر چاوڑا نے بھی اسمبلی سے استعفی دے دیا تھا اور وہ بھی بی جے پی میں شامل ہو گئے تھے۔انہیں نو مارچ کو وجے روپانی حکومت میں وزیر بنایا گیا تھا۔
گزشتہ چند ماہ میں گجرات میں استعفی دینے والے کانگریس ممبران اسمبلی کی تعداد پانچ ہو گئی ہے۔ان پانچ اراکین اسمبلی کے علاوہ کانگریس نے ایک اور رکن اسمبلی گنوا دیا جب بھگوان براڑ کو پانچ مارچ کو ایوان کی رکنیت سے نااہل قرار دیا گیا۔انہیں غیر قانونی کانکنی معاملے میں دو سال کی جیل کی سزا سنائی گئی تھی۔گزشتہ سال جولائی میں کانگریس کے سینئر ممبر اسمبلی کنورجی باولیا نے بھی استعفی دے دیا تھا اور بعد میں ریاستی حکومت میں کابینہ وزیر بنایا گیا۔وہ تب بی جے پی کے ٹکٹ پر ضمنی انتخابات جیتے تھے۔گزشتہ ماہ انجھا سے پہلی بار رکن اسمبلی بنی آشا پٹیل نے ایوان اور کانگریس کی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا تھا اور وہ حکمران پارٹی میں شامل ہو گئی تھیں۔بی جے پی کے پاس اب 182 رکنی اسمبلی میں 100 رکن اسمبلی ہیں جبکہ کانگریس کے پاس 71 ممبران اسمبلی ہیں۔

کیٹاگری میں : هوم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں