priyanka_gandhi-first-political-war-illegal-alcohol-trade-yogi-government-patronage-pranka_gandhi

پرینکا گاندھی کا پہلا سیاسی وار. یوگی حکومت کی سرپرستی میں چل رہا ہے غیر قانونی شراب کا کاروبار: پرینکا گاندھی

پرینکا گاندھی کا پہلا سیاسی وار. یوگی حکومت کی سرپرستی میں چل رہا ہے غیر قانونی شراب کا کاروبار: پرینکا گاندھی

نئی دہلی10فروری ( آئی این ایس انڈیا )

اتر پردیش اور اتراکھنڈ میں زہریلی شراب پینے سے 100 سے زیادہ لوگوں کی موت ہو چکی ہے۔ موت کی تباہی بڑھ ہی رہی ہے اور ہلاک شدگان کے گھروں میں صف ماتم بچھ رہی ہے ۔ اس کا ذمہ دار کون ہے ؟ ہنوز معمہ بنا ہوا ہے ۔اسی کے درمیان کانگریس کی پرینکا گاندھی نے بھی بیان دیا ہے۔ انہوں نے اس پورے حادثہ پر افسوس ظاہر کیا ہے اور کہا ہے کہ اس واقعہ کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ مانا جا رہا ہے کہ باضابطہ طور پر سیاست میں انٹری کے بعد پرینکا کا یہ پہلا بیان ہے۔انہوں نے کہا کہ میں یہ جان کر دنگ رہ گئی اور مغموم ہوں کہ زہریلی شراب سے اتراکھنڈ اور اتر پردیش کے سہارنپور، کشی نگر اور کئی گاؤں میں 100 سے زیادہ لوگوں کی موت ہو چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دل دہلا دینے والی اس واقعہ کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ اتراکھنڈ اور یوپی کی حکومت کی سرپرستی میں غیر قانونی شراب کا اتنا بڑا کاروبار چلاتا ہے ، جس کا تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔کانگریس جنرل سکریٹری نے کہا کہ میں امید کرتی ہوں کہ بی جے پی حکومتوں کی طرف سے مجرموں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی اور مرنے والوں کے اہل خانہ کے لئے مناسب معاوضہ اور سرکاری نوکری کا بندوبست کیا جائے گا۔ پرینکا نے کہا کہ اتنے المناک واقعہ کے بارے میں سن کر میں نے انتہائی پریشان ہوں اور سوگوار اہل خانہ کے تئیں اپنی تعزیت پیش کرتی ہوں ۔مشرقی یوپی کی انچارج پرینکا گاندھی اور (اندرا گاندھی دوئم) نے اس پورے معاملے پر یوگی حکومت پر براہ راست طور پر حملہ بولا ہے۔ جس مشرقی یوپی کی ذمہ داری وہ سنبھال رہی ہے وہ یوگی کا گڑھ ہے اور پرینکا کے بیان سے صاف ہے وہ براہ راست طور پر یوگی آدتیہ ناتھ کی مشکلیں بڑھانے والی ہیں اور آنے والے دنوں میں یوپی کے وزیر اعلی کو تشویش میں ڈال سکتی ہیں۔ اس پورے معاملہ کو لے کر اتر پردیش میں انتظامی کارروائی تیز کر دی گئی ہے۔ یوپی کے آبکاری محکمہ کے مطابق اب تک 297 لوگوں پر مقدمہ درج کرکے 175 افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے. سہارنپور میں 10 پولیس اہلکاروں کو معطل کیا جا چکا ہے۔ دونوں ریاستوں میں اب تک 109 افراد ہلاک ہو چکے ہیں ۔ یوپی میں 77 اور اتراکھنڈ میں 32 لوگوں کی موت ہوئی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں