#case_bihar-shelter-home,

بہار شیلٹر ہوم معاملے میں ناگیشور راؤ کو سپریم کورٹ نے طلب کیا ’ ناگیشور اؤ سی بی آئی کورٹ کے حکم سے کھیل رہاہے‘ : عدلیہ

بہار شیلٹر ہوم معاملے میں ناگیشور راؤ کو سپریم کورٹ نے طلب کیا
’ ناگیشور اؤ سی بی آئی کورٹ کے حکم سے کھیل رہاہے‘ : عدلیہ

نئی دہلی7فروری ( آئی این ایس انڈیا )

بہار کے شیلٹر ہوم کیس میں نتیش حکومت کو پھٹکار لگانے کے بعد سپریم کورٹ نے سی بی آئی کو بھی لتاڑ لگائی ہے۔بہار شیلٹر ہوم کیس کی دوبارہ جمعرات کی سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے کہا کہ آپ سپریم کورٹ کے حکم سے کھیل رہے ہیں۔آپ کو پتہ نہیں کہ آپ نے کیا کیا ہے۔اس معاملے میں ناراض کورٹ نے سی بی آئی سے کہا کہ آپ نے 31 اکتوبر کو کہا تھا کہ اے شرما تحقیقاتی ٹیم کے سب سے سینئر افسر ہوں گے تو پھر تحقیقات کی نگرانی کر رہے اے شرما کا ٹرانسفر کیوں کیا گیا؟۔سپریم کورٹ نے اے شرما کو ہٹائے جانے سے ناراضگی ظاہر کرتے ہوئے اس وقت کے عبوری ڈائریکٹر ایم ناگیشور راؤ کو طلب کیا ہے۔سپریم کورٹ نے کہا کہ ناگیشور راؤ نے اے شرما کا ٹرانسفر کر کے ان کی توہین کی ہے۔12 فروری کو ناگیشور راؤ اور دیگر افسر پیش ہوں گے۔سپریم کورٹ نے کہا کہ گزشتہ حکم میں ہم نے کہا تھا کہ جو سی بی آئی کی ٹیم تحقیقات کر رہی ہے، اس کے سب سے سینئر اے کے شرما ہی ہوں گے۔ان ٹرانسفر نہیں کیا جائے گا۔اے کے شرما جوائنٹ ڈائرکٹر سی بی آئی تھے اور انہیں کی نگرانی میں شیلٹر ہوم کی جانچ چل رہی تھی۔آگے سی جے آئی نے کہا کہ سپریم کورٹ نے کہا کہ ایسا لگ رہا ہے کہ 17 جنوری 2019 کو کابینہ کمیٹی کی منظوری کے بعد ان کا ٹرانسفر کیا گیا،ان سی آرپی ایف میں ایڈیشنل ڈائریکٹر بنایا گیا۔سی بی آئی کے وکیل نے عدالت کو معلومات دی کہ ایم ناگیشور راؤ سمیت دو افسران مظفرپور شیلٹر ہوم سانحہ کے انکوائری افسر اے کے شرما کے ٹرانسفر میں شامل تھے، تو ملک کے چیف جسٹس رنجن گوگوئی نے کہاکہ ہم اسے بہت بہت سنجیدگی سے لینے والے ہیں،آپ نے سپریم کورٹ کے حکم سے کھلواڑ کیا ہے۔اس سے پہلے بہار حکومت کو سپریم کورٹ نے پھٹکار لگائی تھی۔جمعرات کی صبح معاملے کی سماعت کرتے ہوئے چیف جسٹس رنجن گوگوئی نے بہار کے نتیش حکومت کو پھٹکار لگائی اور کہا کہ آپ بدقسمت بچوں کے ساتھ اس طرح برتاؤ کرتے ہیں۔آپ کو اس طریقے کی چیزوں کی اجازت نہیں دے سکتے۔سپریم کورٹ نے بہار حکومت سے دو بجے سارے سوالات کا جواب دینے کو کہا تھا۔بہار حکومت کو پھٹکار لگاتے ہوئے عدالت نے کہا کہ ہم حکومت نہیں چلا رہے ہے لیکن ہم یہ جاننا چاہتے ہیں کہ آپ کو کس طرح حکومت چلا رہے ہیں؟ اس کے ساتھ ہی سپریم کورٹ نے مظفر پور شیلٹر ہوم کیس ٹرائل دہلی ٹرانسفر کر دیا، اب دہلی کی ساکیت کورٹ میں اس کا ٹرائل ہوگا۔کورٹ نے کہا کہ دو ہفتے میں سارے ریکارڈ ٹرانسفر ہو جائیں اور ٹرائل چھ ماہ میں مکمل ہو جانا چاہئے۔ابھی ساکیت کی پاکسوکورٹ میں معاملہ چلے گا۔سپریم کورٹ نے کہا کہ انصاف کے مفاد میں ٹرائل کا ٹرانسفر کیا جا رہا ہے۔سپریم کورٹ نے معاملے کی تحقیقات کر رہی سی بی آئی کی ٹیم کی نگرانی کر رہے جوائنٹ ڈائریکٹر اے کے شرما کے ٹرانسفر پر سخت ناراضگی ظاہرکی ۔چیف جسٹس نے کہا کہ جب سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ بغیر اجازت کے ان ٹرانسفر نہیں ہو گا تو یہ ٹرانسفر کیوں کیا گیا،کیا کابینہ کمیٹی کو بتایا گیا کہ سپریم کورٹ نے ٹرانسفر نہ کرنے کا حکم دیا ہے؟ اب مرکز اس معاملے پر سپریم کورٹ میں اپنا جواب دے گا۔بتا دیںکہ مظفرپور شیلٹر ہوم معاملے میں سپریم کورٹ اہم سماعت کر رہا ہے۔پچھلی سماعت میں عدالت نے کیس کے اہم ملزم برجیش ٹھاکر کی اس درخواست کو مسترد کر دیا تھا، جس ٹھاکر نے اپنے ساتھ پٹیالہ کی جیل میں مارپیٹ کا الزام لگایا تھا۔اس کے علاوہ عدالت نے ٹھاکر کی اس درخواست کو بھی مسترد کر دیا تھا، جس میں اس نے شیلٹرہوم کو توڑے جانے پر روک لگانے کی مانگ کی تھی۔سپریم کورٹ نے مظفر پور شیلٹر ہوم کے بعد بہار کے 16 شیلٹر ہوم کے معاملات کو سی بی آئی کو ٹرانسفر کر دیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں