israel-condemns-cruel-behavior-against-palestinians-disconnect-ties

فلسطینیوںکے خلاف اسرائیلی حکومت کے ظالمانہ سلوک کی مذمت اسلامی ممالک سے اسرائیل سے تعلقات منقطع کرنے کا مطالبہ

فلسطینیوںکے خلاف اسرائیلی حکومت کے ظالمانہ سلوک کی مذمت
اسلامی ممالک سے اسرائیل سے تعلقات منقطع کرنے کا مطالبہ

گلبرگہ5فروری(آئی این ایس انڈیا)

موجودہ حالات میںمنظم سازش کے تحت ساری دنیا میںمسلم مخالف رجحان میںشدت پیداکردی گئی ہے۔اس خیال کااظہار ممتاز دانشور ومفکر ڈاکٹر سریش کھیرنار صدر، ہند فلسطین اتحاد فورم وآل انڈیا سیکولر فورم نے کیاہے۔وہ کل چلبل گارڈن میٹنگ ہال نورباغ روضہ بزرگ گلبرگہ میں قمرالاسلام اسلامک اسٹڈی سرکل گلبرگہ کے زیراہتمام منعقدہ اہم موضوعاتی سمینار کومخاطب کررہے تھے۔ہندفلسطین تعلقات اورموجودہ حالات کے زیرعنوان خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر سریش کھیرنار نے اس بات پرسخت اظہار تاسف کیا کہ مسلمانوں کواس بات کا اندازہ نہیں ہے کہ ان کااصل دشمن کون ہے۔اورنہ وہ یہ جاننے کی کوشش کررہے ہیں کہ آخر ان کااصل دشمن کون ہے۔ڈاکٹر سریش کھیرنار نے مزیدکہا کہ مسلمانوں کوتباہ اوران کاوجود صفحہ ہستی سے مٹانے والوں کویہ بات یادرکھنی چاہئے کہ کسی بھی قوم کوتباہ کرناممکن نہیں ہے کیوںکہ جس قوم کوتباہی کانشانہ بنایا جاتاہے وہ اپنی دشمن قوم کوبھی لے ڈوبتی ہے، آج مسلمانوں کوظلم وتشدد کاشکار بنایاجارہا ہے لیکن جب مسلمان بیدار ومنظم ہوجائیں گے توبازی پلٹ سکتی ہے۔ڈاکٹر سریش کھیرنار نے مزید کہا کہ ہندوستان نے ہمیشہ فلسطین کی حمایت کی ہے لیکن موجودہ حکومت نے اسرائیل کے ساتھ روابط قائم کئے ہیں ۔یہ ہندوستانی روایات کے منافی ہے۔ مہاتما گاندھی نے فلسطین کی حمایت میںجوموقف اختیار کیا اس سے فلسطین کوزبردست تقویت حاصل ہوئی۔مہاتما گاندھی نے اسرائیلی مملکت کے قیام کی پرزورمخالفت کی تھی۔ڈاکٹر سریش کھیرنار نے اپنے حالیہ دورہ فلسطین کاذکر کرتے ہوئے بتایا کہ فلسطینی مسلمان کس قدر اسرائیلی ظلم وزیادتی اورجارحیت کاشکار ہیں۔انہوںنے کہا کہ اسرائیل نے غزہ کوایک اوپن جیل میں تبدیل کردیا ہے۔فلسطینی مسلمان بالکل غیرمحفوظ ہیں اوریہ کہانہیں جاسکتا کہ رات میںسویافلسطینی مسلمان صبح زندہ رہے گا یانہیں۔وہاںکوئی عمارت ایسی نہیں جس میںسوراخ نہ ہو۔اسرائیل کمپیوٹر کے ذریعہ فلسطینی مقامات کودھماکوں کانشانہ بنارہاہے۔ ڈاکٹر سریش کھیرنار نے اس بات پرسخت اظہارتاسف کیاکہ عرب ممالک فلسطین پر اسرائیل کی جارحیت پربدتر ین بے حسی کامظاہرہ کررہے ہیں۔ڈاکٹرسریش کھیرنار نے ہندوستانی مسلمانوں کی زبوں حالی پربھی افسوس کااظہار کرتے ہوئے کہاکہ انصاف پسندی اورملک کی سیکولر روایات کاتقاضہ ہے کہ مسلمانوں کے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں اورزیادتیوں کے خلاف آواز بلند کی جائے۔قبل ازیں سمینار کی کارروائی کاآغاز مولانا محمد نوح صدرانڈین یونین مسلم لیگ ضلع گلبرگہ کی قرأت سے ہوا۔ سینئر صحافی عزیزاللہ سرمست نے علامہ اقبال کے نعتیہ اشعار پیش کئے۔سمینار کی صدارت ڈاکٹر محمداصغرچلبل صدر قمرالاسلام اسلامک اسٹڈی سرکل گلبرگہ نے کی۔انہوںنے اپنی صدارتی تقریر میںاسرائیلی مملکت کے قیام کی تاریخ بیان کی اورفلسطینی مسلمانوں کے خلاف جاری اسرائیل کی جارحیت کوانسانیت سوز قراردیا۔اصغرچلبل نے کہاکہ 58اسلامی ممالک ہونے کے باوجود اسرائیل کے خلاف ان کی جانب سے کوئی عملی اقدام نہیں کیاجارہاہے۔اس وقت عالم اسلام ایک نازک موڑ سے گذررہا ہے اور اسرائیل کی جارحیت میںآئے دن اضافہ ہو رہاہے۔ڈاکٹر اصغرچلبل نے کہاکہ اسرائیل کی جارحیت اب مزید برداشت نہیں کی جاسکتی ۔اسرائیل کی جارحیت کے خلاف کارروائی کرنے اور فلسطینی مسلمانوں کوتحفظ فراہم کرنے کے لئے اوآئی سی کوآگے آنے کی ضرورت ہے۔تمام اسلامی اورجمہوری ممالک میںواقع اسرائیل کے سفارتخانوں کوبند کردیا جاناچاہئے۔ممتاز مفکر اسلام ڈاکٹر محمد حبیب الرحمن نے اسلام کے خلاف یہودی سازشیں کے زیرعنوان نہایت مفصل ومدلل خطاب کیا۔انہوںنے کہاکہ یہودی قوم ،نہایت خطرناک، دنیا ومال پرست اورانتہائی بے حیاء واقع ہوئی ہے۔یہودی قوم نہ صرف اسلام کی دشمن رہی بلکہ اس نے انبیاء کو شہید کروایا اور حضور اکرم ؐ کیخلاف منافقین کو ہتھیار بنایا۔ یہودیوں کی سازش کی وجہ سے جنگ احزاب پیش آئی ۔1944میں پیش آئی دوسری عالمگیر جنگ میں تعاون کیلئے یہودیوں نے اسرائیلی مملکت کے لئے فلسطین کے علاقہ میں خطہ اراضی کامطالبہ کیا اور اسے حاصل کیا۔ مملکت اسرائیل کے نقشہ میں مصر، شام ، عراق اورمدینہ تک کا رقبہ شامل کیا گیا ہے،جس سے اسرائیل کے جارحانہ عزائم کا پتہ چلتا ہے۔ ڈاکٹر حبیب الرحمن نے مزید بتایا کہ نور الدین زنگی کے زمانہ میں یہودیوں نے سرنگ کے ذریعہ حضور ؐ کے جسم اطہر کو حاصل کرنے کی سازش کی تھی لیکن نورالدین زنگی نے حضورؐ کی بشارت ملنے پر اس سازش کو ناکام بنادیا۔ انہوںنے مزید کہا کہ منظم یہودی سازش کے تحت عالمی سطح پر مسلمانوں کی امیج کو بگاڑنے کے لئے انھیں پہلے قدامت پسند اور اب دہشت گرد قرار دیا گیا ہے۔مولانا جاوید عالم قاسمی نائب صدر آل انڈیا ملی کونسل ضلع گلبرگہ خطیب و امام جامد مسجد محبس نے یہودی تاریخ اور قرآن کے زیر عنوان مخاطب کرتے ہوئے بتایا کہ قرآن میں یہودیوں کو 3القاب سے مخاطب کایگیا ہے۔ بنی اسرائیل، اہل کتاب اور یہودی انہوںنے مزید کہا کہ اللہ تعالیٰ نے یہودیوں کو بڑی فضیلت اور شرف سے نوازا۔ حضرت سید نا اسماعیل ؑ کی نسل میں سوائے حضورؐ کے کوئی نبی نہیں آئے لیکن بنی اسرائیل میں تقریباً ایک لاکھ انبیاء ہوئے ۔اللہ تعالیٰ کی نافرمانی کی وجہ سے یہودی اللہ کی ناراضگی اور عتاب کا شکار ہوئے۔انہوںنے کہا کہ یہودیوں نے کئی ایک فتنوں اور سازشوں کے علاوہ 3انبیاء کو شہید کروایا۔مولانا جاوید عالم قاسمی نے مزیدکہا کہ فضیلت اور شرف سے محروم ہونے کے بعد یہودی قوم مسلمانوں کی سب سے بڑی دشمن بن گئی ہے۔مولانا جاوید عالم قاسمی نے مزید کہا کہ امت محمدی آفاقی اور یونیورسیل امت ہے لیکن یہ امت بھی آج بنی اسرائیل کے مرض میں مبتلا ہوگئی ہے اور اپنے مقصد و جود سے ہٹ گئی ہے۔ اللہ کی نافرمان میں مبتلا ہوگئی ہے۔ خیرامت کی حیثیت سے دوسروں کی فلاح، انسانیت کی بہبودی کے بجائے خود غرضی اور مفاد پرستی کو شیوہ بنالیا ہے۔ مولانا جاوید عالم قاسمی نے مزید کہاکہ قرآن مجید میں ہمارے سارے مسائل کا حل موجود ہے اور اللہ کی نافرمانی قوموں کا انجام بیان کیاگیا ہے لیکن آج ہم نے قرآن سے اپنا تعلق ختم کرلیا ہے اس لئے آج ہم زوال و پستی کی طرف بڑھ رہے ہیں اور ظلم و زیادتی کا شکار ہیں۔ سینئر صحافی عزیزاللہ سرمست نے سیمینار کی نظامت کی اور کہا کہ گلبرگہ میں ملی سیاسی بیداری لانے اور تاریخ اسلام پر سیمینارس سمپوزیمس کے انعقاد کے لئے اسٹڈی سرکل کی عرصہ سے ضرورت محسوس کی جارہی تھی۔ انہوںنے توقع ظاہر کی کہ قمرالاسلام اسلامک اسٹڈی سرکل کے ذریعہ اس دیرینہ کمی کو پورا کیا جائے گا۔ انہوںنے سیمینار کے موضوعات کی اہمیت کے پیش نظر انہی موضوعات پر جلسہ عام منعقد کرنے کا مشورہ دیا۔مولانا محمد غوث الدین قاسمی صدر آل انڈیا ملی کونسل ضلع گلبرگہ ، عزیزالدین اے ای ای ، ڈاکٹر رستم فیضی، اقبال علی سیکریٹری آل انڈیا بیت المال، جاویداین آر آئی کارپوریٹر ، محمد اسلم صاحب سابق چیئرمین ضلع وقف مشاورتی کمیٹی گلبرگہ ،محمد رفیق رہبر، مشتاق احمد اے ای ای ،محمد محمود اے ای ،نذیر استا

کیٹاگری میں : هوم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں