1

دہشت گردوں کےلئے انسانی حقوق کی بات کرنے کا کیا جواز ہے؟ راج ناتھ

نئی دہلی، 12 اکتوبر(ایجنسیز) مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ عالمی برادری کی خوشحالی کی تمنا ہندوستانی تہذیب اور روایت کا اٹوٹ حصہ رہا ہے اس لئے غیر قانونی دراندازی کرنے والے بنگلہ دیشیوں اور روہنگیا لوگوں کے ساتھ ہندوستان میں کبھی غیر انسانی سلوک نہیں کیا گیا تاہم حیرت اس بات پر ہے کہ کچھ لوگ انسانی حقوق کے نام پر دہشت گردوں کے لئے بھی فکر مندرہتے ہیں۔مسٹر سنگھ نے قومی انسانی حقوق کمیشن کی سلور جوبلی پر یہاں منعقد ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جو لوگ سرحد پار سے غیر قانونی دراندازی کرکے ہمارے ملک میں دہشت پھیلاتے ہیں ، تباہی مچاتے ہیں اور بے قصور لوگوں کی جان لیتے ہیں ، کچھ لوگ ان دہشت گردوں کے لئے بھی انسانی حقوق کے نام پر فکر مند ہوتے ہیں ، یہ یقینی طورپر تشویش کا موجب ہے۔وزیر داخلہ نے کہا کہ ہندوستان کو حقوق انسانی کا سبق سکھانے کی ضرورت نہیں ہے کیوں کہ ہماری تہذیب انسانی حقوق کی پرورش و پرداخت کرتی رہی ہے اور ہم اس پر عمل کرتے ہیں۔ ہماری تہذیب اور ثقافت میں پوری دنیا کی خوشحالی، صحت مند ی اور سب کی خوشحالی کی تمنا کی گئی ہے۔ مساوات کی بات ہندوستانی روایت کا حصہ ہے او رہماری مذہبی کتابیں ان ہدایات سے بھری ہوئی ہیں اس لئے حقوق انسانی کو ہم سب سے بہتر طریقے سے سمجھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مودی حکومت نے اس روایت کو مزید وسعت دیتے ہوئے سب کو صحت مند بنانے کے لئے دنیا کی سب سے بڑی صحت اسکیم آیوشمان بھارت شروع کی ہے۔ یہ صحت کے نقطہ نظر سے بہت بڑا انسانی حقوق ہے ۔ یہی نہیں حکومت نے انسانی حقوق کے تحفظ کے لئے خواتین کے حقوق پر خصوصی توجہ دی ہے اور اس کے لئے بیٹی بچاو بیٹی پڑھاو جیسی پرعزم اسکیم شروع کی گئی ہے اور یہ بہت بہتر طریقے سے چل رہی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں