1

ایمان پر استقامت اور مسلمانوں کی ذہن سازی

ایمان پر استقامت
اور مسلمانوں کی ذہن سازی

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی

یکم اکتوبر ۲۰۱۸ء کو ایک ایسا تکلیف دہ واقعہ پیش آیا، جو مسلمانوں کی آنکھوں کو بے خواب اور کروٹوں کو بے سکون کر دے، مغربی یوپی کے معروف شہر باغپت کے قرب وجوار کے دیہات کا ایک خاندان–جس کے سربراہ کا نام اختر علی ہے — مسلم سماج کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے مرتد ہو گیا، اور اس نے باضابطہ قانونی کارروائی کو انجام دیتے ہوئے تبدیلیٔ مذہب کا عمل کیا، ابتدائََ تو ۲۰؍افراد کے مرتد ہونے کی خبر آئی، پھر اطلاع آئی کہ کچھ لوگ تائب ہوگئے ہیں اور ۱۲؍یا ۱۴؍ افراد ارتداد پر قائم ہیں، اس کا محرک یہ نہیں ہے کہ انہیں اسلام میں کوئی کمی نظر آئی؛ بلکہ اس کا سبب یہ ہے کہ ۲۲؍جولائی کو اختر علی کے بیٹے گلزار علی کی لاش اس کی دوکان میں ملی، مرتد ہونے والے خاندان کا تأثر یہ ہے کہ یہ قتل اسی سماج میں مقتول سے مخاصمت رکھنے والے بعض مسلمانوں نے کیا ہے؛ لیکن اس کو انصاف دلانے میں مسلم سماج نے کوئی مدد نہیں کی، اس کے رد عمل میں ان لوگوں نے اجتماعی طور پرمرتد ہونے کا فیصلہ کرلیا، ظاہر ہے کہ مرتد ہونے والوں کی اس بات میں بظاہر کوئی وزن نہیں ہے،غلطی مسلمانوں کی ہو اور اس کا بدلہ اسلام سے لیا جائے، کیا یہ درست ہو سکتا ہے؟ پھر یہ کہ انصاف کی لڑائی عدالت میں لڑی جاتی ہے اور ظالم کے خلاف کارروائی پولیس کے ذریعہ عمل میں آتی ہے، تو ناراض تو انہیں پولیس سے ہونا چاہئے نہ کہ مسلم سماج سے، جو قانون کو اپنے ہاتھ میں نہیں لے سکتے۔
اس ناخوشگوار واقعہ کی تہہ میں دو خوشگوار پہلو بھی موجود ہیں، ایک یہ کہ جیسے بہت سے ہندو بھائی مذہب تبدیل کرتے ہوئے بتاتے ہیں کہ ہندو مذہب میں انہیں کیا خامی نظر آئی؟ مثلاََ: عدم مساوات اور نابرابری، اس واقعہ میں مرتد ہونے والوں کو یہ کہنے کی ہمت نہیں ہوئی کہ انہوں نے مذہب اسلام میں فلاں فلاں خامی پائی ہے؛ اس لئے وہ مذہب تبدیل کر رہے ہیں؛ لہٰذا یہ مسلمانوں کی شکست؛ لیکن اسلام کی فتح ہے؛ البتہ مسلمانوں کا مذہبی فریضہ ہے کہ وہ ظالم کے مقابلہ مظلوم کی مدد کریں، اس فریضہ سے غفلت کا رد عمل بعض دفعہ کتنا سنگین ہوتا ہے، یہ اس کی ایک مثال ہے!دوسرے: مرتد ہونے والے خاندان کی متعدد خواتین نے اعلان کیا کہ وہ اسلام پر قائم رہیں گی اور ہرگز مذہب تبدیل نہیں کریں گی؛ حالاں کہ ان کے شوہر مرتد ہو چکے تھے، ان کے اس جذبۂ استقامت کو جتنی داد دی جائے، کم ہے، اور جو لوگ کہتے ہیں کہ اسلام میں عورتوں کے ساتھ ظلم کیا جاتا ہے، یہ ان کے منہ پر طمانچہ ہے۔
لیکن مسلمانوں اور خاص کر علماء، مذہبی جماعتوں اور پیشواؤں کا فریضہ ہے کہ وہ اس بارے میں پوری فکر مندی سے کام لیں، مسلم سماج کو ایسے فتنوں سے بچائیں، جہاں جلسوں، اجتماعات اور جمعہ وعیدین کے خطبات میں اعمال صالحہ کی ترغیب دی جاتی ہے، وہیں مسلمانوں کو ایمان کی حقیقت اور اس کی ا ہمیت بھی بتائی جائے، جیسے عملی گناہوں کی شناعت بیان کی جاتی ہے، اسی طرح کفروشرک کی برائی بھی ان کے سامنے رکھی جائے، قرآن وحدیث سے بھی انہیں سمجھایا جائے اور عقیدۂ توحید کی معقولیت، اس کی کائنات کی فطرت سے مطابقت اور شرک کی نامعقولیت بھی انہیں سمجھائی جائے، حضرت مولانا اشرف علی تھانویؒ فرمایا کرتے تھے کہ لوگ وضوء اور روزہ کے نواقض کے مسائل تو بتاتے ہیں؛ لیکن نواقض ایمان نہیں بتاتے، یعنی جن باتوں کی وجہ سے انسان کا ایمان ختم ہو جاتا ہے، ان کوبھی بتانا چاہئے، موجودہ حالات میں اس کی ضرورت واہمیت بہت بڑھ گئی ہے۔
سب سے اہم بات یہ ہے کہ لوگوں کو ایمان اور ہدایت کی اہمیت سمجھائی جائے، کہ یہ نعمت اللہ تعالیٰ کی توفیق اور حُسن انتخاب سے ملتی ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو بھیجا ہی گیا تھا انسانیت کی ہدایت ورہنمائی کے لئے، پھر بھی آپ سے فرمایا گیا کہ ضروری نہیں کہ آپ جسے چاہیں، وہ ہدایت پا جائیں،اللہ تعالیٰ اپنی مشیت خصوصی سے جس کو چاہتے ہیں، ہدایت سے نوازتے ہیں: إنک لا تھدي من أحببت ولکن اللہ یھدي من یشاء (قصص: ۵۶) تمام رشتوں میں سب سے قربت کا رشتہ بیوی اور اولاد کا ہوتا ہے؛ لیکن حضرت نوح اور حضرت لوط علیہما السلام کی بیوی نیز حضرت نوح کی اولاد کے لئے ہدایت مقدر نہیں ہو سکی، (تحریم: ۱۰-ھود:۵۶) عبداللہ بن سعد بن ابی سرح مسلمان ہو،ا بارگاہ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم میں حاضر ہوا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کو وحی کی کتابت کرائی؛ لیکن اللہ کی طرف سے اس کے لئے ہدایت پر قائم رہنا مقدر نہیں تھا؛ اس لئے پھر مرتد ہوگیا، پھر فتح مکہ کے موقع سے اس نے توبہ کی اور حضرت عثمان غنیؓ کی سفارش پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی توبہ قبول فرمائی، (مسند بزار، حدیث نمبر: ۱۱۵۱) اسی لئے اللہ تعالیٰ نے خاص طور پر دعاء سکھائی ہے: اے اللہ! ہدایت پانے کے بعد پھر ہمارے دل کو کجی میں مبتلا نہ فرمادیجئے، ربنا لاتزغ قلوبنا بعد إذ ھدیتنا (آل عمران: ۸)
ایمان کی اس اہمیت کا تقاضہ ہے کہ ایمان کی حفاظت میں جن آزمائشوں سے گزرنا پڑے، ایک صاحب ایمان ان پر صبر کرے، اور اس کے پایۂ استقامت میں کوئی تزلزل نہ آئے، قرآن مجید میں اہل ایمان اور کفر کی نمائندہ ظالم قوتوں کے درمیان تصادم کے بہت سے واقعات نقل کئے گئے ہیں، ان واقعات مین کہیں ایسا بھی ہوا کہ اہل ایمان کو غلبہ حاصل ہوا، یا ایسا معجزہ ظہور میں آیا کہ کفر کی طاقت پاش پاش ہو گئی؛ لیکن بہت سی دفعہ اہل ایمان کو صبروآزمائش کے مرحلوں سے گزرنا پڑا، اور بظاہر وہ ظلم کی چکی میں پستے رہے، قرآن میں ان واقعات کے تذکرہ کا بظاہر یہی مقصد ہے کہ ایمان اور عمل صالح کی بناء پر اللہ تعالیٰ نے آخرت کی کامیابی اور نجات کا وعدہ کیا ہے، اور یہ ایک یقینی بات ہے، ان شاء اللہ اہل ایمان ہی آخرت میں سرخرو ہوں گے؛ لیکن اللہ تعالیٰ نے دنیا میں یہ وعدہ نہیں فرمایا کہ بہر صورت مسلمانوں ہی کو مادی کامیابی حاصل ہوگی، ان کے دشمن یقینی طور پر مغلوب ہوجائیں گے، انہیں تکلیف سے آزمایا نہیں جائے گا اور اُن کے لئے پھولوں کی سیج بچھائی جائے گی؛ بلکہ قرآن نے اہل ایمان کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم تمہیں جان ،مال اوراولاد کے نقصان سے ضرور ہی آزمائیں گے: ولنبلونکم بشئي من الخوف والجوع ونقص من الأموال والأنفس والثمرات( بقرہ: ۱۵۵)
قرآن مجید میں متعدد واقعات ذکر کئے گئے، جن میں اصحاب ایمان کے بعض گروہوں کے ساتھ بڑا ظلم روا رکھا گیا؛ لیکن کبھی انہوں نے دعوت حق سے منہ نہیں پھیرا، قرآن مجیدمیں ان جادوگروں کا ذکر کیا گیا ہے، جن کو فرعون نے حضرت موسیٰ کے مقابلہ میں پورے مصر سے جمع کیا تھا، جب ان جادوگروں پر یہ بات واضح ہو گئی کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام جادوگر نہیں ہیں ؛ بلکہ واقعی اللہ کے نبی ہیں، تو وہ ایمان لے آئے، فرعون نے کہا : میں تم سب کے الٹے ہاتھ پاؤں کاٹ ڈالوں گا، اور سولی پر چڑھا دوں گا؛ لیکن ان حضرات نے جواب دیا کہ ہمیں تو یوں بھی اللہ کی طرف لوٹنا ہی ہے، اور اللہ تعالیٰ سے دعاء کی کہ ہمیں صبر کرنے کی قوت عطا فرما اور اسلام کی حالت میں اس دنیائے فانی سے اُٹھا: ربنا أفرغ علینا صبراََ وتوفنا مسلمین ( اعراف:۱۲۰-۱۲۶)
قرآن مجید میں ایک اور واقعہ’’ اصحاب اُخدود‘‘ کا ذکر کیا گیا ہے، کچھ لوگ جو حقیقی عیسائیت پر قائم تھے ،مشرک حکمرانوں نے ان کو تبدیلیٔ مذہب کے لئے مجبورکرنے کی کوشش کی، یہاں تک کہ ایک بڑی خندق کھود کر آگ سلگائی گئی،تمام اہل ایمان کو اس دہکتی ہوئی آگ میں پھینک دیا گیا اور یہ سب کچھ ان کے ساتھ صرف مسلمان ہونے کی وجہ سے کیا گیا: وما نقموا منھم إلا أن یؤمنوا باللہ العزیز الحمید(بروج: ۸) ؛ لیکن اس کے باوجود وہ اس پر ثابت قدم رہے، انہوں نے نذر آتش ہو جانا گوارا کیا؛ لیکن دولت ایمان سے محرومی کو قبول نہیں کیا۔
خود صحابہ کرامؓ نے ایمان کے لئے کتنی قربانیاں دیں؟سیرت کے صفحات قربانی کے ان نقوش سے روشن ہیں، یہ امیہ ہے، جو حضرت بلالؓ کو دوپہر کی دھوپ میں مکہ کی سنگلاخ وادیوں میں گھسیٹتا اور گھسیٹواتا تھا، پھر ان کے سینہ پر پتھر کی چٹان رکھ دیتا تھا کہ وہ اس گرم ریت پر حرکت بھی نہ کر سکیں، اور کروٹ بھی نہ لے سکیں، پھر کہتا تھا: تم کو مرنے تک اسی طرح رہنا ہے، اس سے بچنے کی ایک ہی صورت ہے کہ تم محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے نبی ہونے کا انکار کرو اور لات وعزیٰ کی مورتیوں کی پوجا کرو، قربان جائیے، حضرت بلالؓ پر کہ حالاں کہ ایسے حالات میں ایمان پر قائم رہنے کے ساتھ صرف زبان سے کلمۂ کفر کہنے کی گنجائش ہے؛ لیکن حضرت بلالؓ کے عشق ایمانی اور جذبۂ قربانی کو یہ بات بھی گوارا نہیں تھی اور ان کی زبان پر’’ احد احد‘‘ یعنی ’’اللہ ایک ہے، اللہ ایک ہے‘‘ کا کلمہ جاری رہتا تھا (حلیۃ الاولیاء: ۱؍۱۴۸)
یہ حضرت خبیب انصاریؓ ہیں، جنہیں اہل مکہ نے گرفتار کر لیا تھا، جب انہیں غزوہ بدر کے بعض مقتولین کے بدلہ میں حرم سے باہر لے کر نکلے؛ تاکہ انہیں قتل کر دیا جائے تو ان کی ثابت قدمی کا حال یہ تھا کہ نہ رونا دھونا ، نہ آہ وواویلا، نہ جزع وفزع، نہ جان بخشی کی اپیل اور نہ خوشامد، نہ دل کے اطمینان کے ساتھ کلمۂ کفر کا تلفظ کہ جان بچانے کے لئے خود قرآن مجید نے اس کی اجازت دی (سورۂ نحل: ۱۰۶) ؛ بلکہ صرف دو رکعت نماز کی اجازت طلب کی اوردوگانہ ادا فرمائی، پھر فرمایا: اگر مجھے یہ خیال نہ ہوتا کہ میں نماز لمبی کروں تو تم اس کو موت سے گھبراہٹ سمجھوگے تو میں نماز کو لمبی کرتا: واللہ لو لا أن تحسبوا أن ما بی جزع لزدت (بخاری، حدیث نمبر: ۳۹۸۹) اس طرح حضرت خبیب رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اللہ ورسول سے وفاداری کا حق ادا کر دیا؛ چنانچہ یہ مسلمانوں کی سنت بن گئی کہ جب بھی کسی مسلمان کو گرفتار کر کے قتل کیا جاتا تو وہ اس سے پہلے دو رکعت نماز ادا کرتا، (بخاری،حدیث نمبر: ۳۹۸۹)
اس لئے مسلمانوں کو سمجھانے کی ضرورت ہے کہ مسلمان ہونا کوچۂ عشق میں قدم رکھنا ہے، عجب نہیں کہ اس میں آگ کے شعلوں پر چلنا اور کانٹوں بھرے راستہ کو طے کرنا پڑے؛ لیکن جب انسان جان ومال اورعزت وآبرو کی حفاظت کے لئے ایسی آزمائشوں کو برداشت کرتا ہے تو ایمان کی نعمت تو اس سے کہیں بڑھی ہوئی ہے، اس کے لئے تو یہ قربانیاں ہیچ ہیں؛ اس لئے ہر مسلمان کو اللہ سے دعاء کرنی چاہئ%D

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں